مہاراشٹر کی ڈھائی دن کی حکومت دستور کے آگے زیر ہوتی نظر آرہی , درینچہ شک

مہاراشٹر کی ڈھائی دن کی حکومت دستور کے آگے زیر ہوتی نظر آرہی , درینچہ شک ڈاکٹر منظور عالم آل انڈیا ملْی کونسل , نیشنل جنرل سکریٹری ! کسی بھی ملک کا دستور ہو اگر دستور سے کھلواڑ ہوا تو ملک تباہی کی طرف مائل ہو جاتا ہے پھر وہ تباہی ملک کے ٹکڑوں کی شکل میں ہو یا خانہ جنگی کی شکل میں یا اقتصادی کمزوری کی شکل میں ہو۔ ھمارے ملک بھارت کا دستور سب سے لمبا قداور دستور ہے جو صدیوں تک ملک کے استحکام کے لئے کافی اور مشعل راہ ہے۔ لیکن۲۰۱۴ میں خود ساختہ اکثریت کے بلبوتے پر تشکیل شدہ بی جے پی حکومت کے طرز و رویہ کو دیکھتے ہوے آل انڈیا ملی کونسل نے ۲۰۱۸ کے اواخر میں تال کٹورہ اسٹیڈیم میں ملک کی مختلف ساٹھ پینسٹھ تنظیموں کو متحد کر کے دستور بچاو ملک بناو کا نعرہ دیا تھا۔ جس کی ضرورت و اہمیت آج 26 نومبر 2019 کو دکھائی پڑتی ہے کہ اج یوم دستور کے دن مہاراشٹر کی ڈھائی دن کی حکومت دستور کے آگے زیر ہوتی نظر آرہی ہے۔ اور بھارت کے وزیراعظم بھی دونوں ایوانوں کے مشترک اجلاس بلا کر دستور کے تحفظ کی بات کرتے نظر آئے۔ دستور کی پابندی ہی میں ایک عمدہ بھارت کی تصویر ان کو بھی نظر آئی صدر جمہوریہ رامناتھ کی حاضری میں دیا ان کا بھاشن اگر ضحیح معنی میں من کی بات ہے تو ہم بھی دل سے دستور ھند کو اپناتے ہوے ملک کی تعمیر و ترقی کے لئے ساعی رہ سکتے ہیں اگر این آر سی لنچنگ ھندوتو پسند تعلیمی پالیسی یا بے روزگاروں کا خون چوسنے کے لئے بنائی گئ اقتصادی پالیسیاں حائل نہ ہوں۔ ہمارا نعرہ دستور بچاو ملک بناو صرف بھارت کے لئے نہیں بلکہ یہ ایک انٹرنیشنل نعرہ دنیا کے تمام ملکوں کے لئے اس میں مثبت پہلو ہے اس لئے ہم اس کی گونج اورصدا بلند کرتے رہینگے انشاء اللہ۔